اپنے وقت کا مؤثر استعمال کریں

بدقسمتی سے طلباء کے لیے وقت کے مؤثر استعمال کے بارے میں ہمیں چند روایتی سی ٹپس ملتی ہیں مثلاً کاموں کو شیڈولکریں، ترجیحات طے کریں، کافی نیند لیں وغیرہ۔ درحقیقت آپ کو اپنے وقت کےبہتر استعمال اور اسکول کے پروجیکٹس پر کام کرنے کے لیے زیادہ مؤثر تدبیر اختیار کرنے کی ضرورت ہے۔

طلباء (بلکہ ہر ایک) کے لئے ٹائم مینجمنٹ کا مطلب ایک بامقصد دن گزارنا ہے۔اصل مقصدیہ ہے کہ جو وقت آپ کو دستیاب ہے ، اسے کنٹرول کرنا، اس کو تعمیری انداز میں استعمال کرنا ، اہم کاموں پر توجہ مرکوز کرنا ، اور سب سے بڑھ کر زندگی میں توازن کو بہتر بنانا ہے۔

اس سلسلہ میں ہم نے ذیل میں طلباء کے لیے کاموں پر توجہ مرکوز رکھنے ، سستی و کاہلی سے بچنے اور اپنے وقت کو بہتر طور پر استعمال کرنے کے بارے میں چندتجاویز اکٹھی کی ہیں:

1۔اپنے دن کی منصوبہ بندی کے لئے روزانہ کے شیڈول ٹیمپلیٹ کا استعمال کریں

کلاسز ، سیمینارز اور ورکشاپس میں شاید آپ کا کافی وقت لگ سکتا ہے ، لیکن اصل بات یہ ہے کہ آپ اپنا وقت کس طرح طے کرتے ہیں۔

اگرچہ بہت سے لوگ تجویز کرتے ہیں کہ روزانہ کرنے کے کاموں کی فہرست بنائیں ، لیکن اس کے ساتھ یہ بہت ضروری ہے کہ آپ کو شیڈولبنانے میں مہارت حاصل ہو۔

کاموں کی فہرست صرف یہ بتاتی ہے کہ آپ کیا کرنا چاہتے ہیں۔ شیڈول آپ کو بتاتا ہے کہ آپ کو کام کب کرنا ہے۔پورے دن کا شیڈول آپ کے وقت کو کنٹرول میں رکھتا ہے۔ اس سے آپ کو منظم رہنے ، اہم کاموں پر توجہ مرکوز رکھنے اور سستی اورتاخیر پر قابو پانے میں مدد ملے گی۔

بل گیٹس سے لے کر ایلون مسک تک دنیا کے بہت سے کامیابلوگ ٹائم بلاکنگ کا طریقہ استعمال کرتے ہیں، یعنی سادہ الفاظ میںیہ طے کرنا کہ آپ اپنے دن کا ہر منٹ کیسے گزارنا چاہتے ہیں۔اس کی ابتداء کرنے کے لیے ذیل میں کچھ نکات دیے جا رہے ہیں:

پہلا مرحلہ: ہر دن کے لئے وقت مختص کریں

مطلب یہ کہ بامقصد دن گزارنے کے لیے آپ کو معلوم ہونا چاہیے کہ دن کیسے شروع اور ختم کرنا ہے۔ اپنے صبح اور شام کے معمولات کے بارے میں سوچیں اور پھر اپنے اہم ترین کاموں کے لئے وقت بلاک کر دیں۔ مثال کے طور پر ، ایک مصنف ہر صبح دو گھنٹے کا وقت لکھنے کے لیے مختص کر دیتے ہیں۔

دوسرا مرحلہ: اپنے اہم ترین منصوبوں کے لئے علیٰحدہ وقت رکھیں

اگلی بات یہ کہ آپ اپنے سب سے اہم منصوبوں کے لئے الگ سے وقت رکھیں۔ لیکن آپ کو خیال رکھنا ہے کہ آپ واقعی اسے بامقصد انداز میں استعمال کر رہے ہیں اور اس کا کوئی نتیجہ برآمد ہو گا۔اگر آپ کو اس سلسلے میں مدد کی ضرورت ہو تو آپ کسی بھی کیلنڈرکا استعمال کرسکتے ہیں۔

تیسرا مرحلہ: معاشرتی میل جول اور دیگر کاموں کے لیے مناسب وقفے رکھیں

ایک اچھے شیڈولکاحقیقت پسندانہ ہونا ضروری ہے۔ اس کا مطلب ہے کھانے ، ورزش ، معاشرتی معاملات ، خاندان اور دوست احباب سے ملنے جلنے ، اور دوسرے تمام کاموں کے لیے بھی وقت رکھیں جو آپ کو خوش اور متحرک رکھتے ہیں۔

2۔یہ جاننے کی کوشش کریں کہ آپ اپنا وقت کس طرح گزار رہے ہیں اور کہاں ضائع کر رہے ہیں

اگرچہ آپ کا شیڈول آپ کو اپنے دن کی اچھی تصویر دکھاتا ہے ، لیکن وقت کے انتظام کی بہتر عادات پیدا کرنے کے لیے آپ کو یہ جاننے کی ضرورت ہے کہ آپ حقیقت میں اپنا وقت کس طرح گزار رہے ہیں۔یہ جانے بغیر کہ ہر دن آپ کا وقت کہاں جاتا ہے وقت کے استعمال کی بہتر حکمت عملی تیار کرنا اور اہم کاموں پر توجہ مرکوز رکھنا تقریباً نا ممکن ہے۔اگرآپ اپنے وقت کے بارے میں جاننا چاہتے ہیں تو آپ کے پاس دو طریقے ہیں:

ایک یہ کہ آپ کسی کیلنڈر یا ڈائری کے ذریعے دو یا تین دن تک اپنے وقت کے استعمال کا ریکارڈ رکھیں۔دوسرے یہ کہ کسی ایپ یا الیکٹرانک ٹول کے ذریعے اپنے وقت کے استعمال کو ٹریک کرتے رہیں۔اس سے آپ کو یہ پتہ چلے گا کہ آپ کا وقت کون سے مفید کاموں میں استعمال ہو رہا ہے اور کون سے کام ایسے ہیں جہاں آپ کا وقت ضائع ہو رہا ہے۔

3۔اپنی کارکردگی کی پیمائش کے لیے مناسب اہداف طے کریں

اہداف طے کرنا سکول کا کام کرنے کا شوق پیدا کرنے کا ایک بہت اچھا طریقہ ہے۔ بدقسمتی سے ہم میں سے زیادہ ترلوگ صحیح طریقے سے اہداف طے نہیں کرتے۔ مسئلہ یہ ہے کہ اہداف صرف یہ بتاتے ہیں کہ آخرمیں کیا نتیجہ حاصل ہو گا۔ وہ آپ کو اس کے بارے میں کچھ نہیں بتاتے کہ آپ ان کو کیسے حاصل کریں گے۔

مقصد سے شروع کرنے اور پھرکام کرنے کی بجائے ، اس بات پر زیادہ توجہ دیں کہ مقصد تک پہنچنے کے لئےآپ کو کیا کرنے کی ضرورت ہے۔دوسرے الفاظ میں:

آپ روزانہ کیا کرسکتے ہیں جو آپ کو حتمی مقصد کے حصول میں مدد فراہم کرے گا؟

اس کا مطلب ہے کہ آپ اپنی کارکردگی پر مسلسل نظر رکھیں ، اسے بہتر بنانے کی کوشش کریں اورمقصد کے حصول کے لیے بہتر عادات اختیا کرنے پر توجہ دیں۔

مثال کے طور پر آپ کو مہینے کے آخر تک 4000 لفاظ پر مشتمل مضمون لکھنا ہے۔ اب بجائے اس کے کہ آپ اتنا بڑا مضمون لکھنے سے گھبرا جائیں ، روزانہ صرف 500 الفاظ لکھنے کا ہدف مقرر کریں۔ اس طرح آپ ایک ہفتہ میں نہ صرف یہ کہ اپنا کام پورا کر لیں گے بلکہ اس میں ترامیم اور اسے حتمی شکل دینے کے لیے آپ کے پاس کافی وقت ہو گا۔

4۔بڑے منصوبوں کو چھوٹے اور قابل عمل حصوں میں تقسیم کریں

مناسب اہداف طے کرنے کے عمل کا ایک حصہ بڑے کاموں کو روزانہ کے چھوٹے کاموں میں توڑنا ہے۔ اس سے نہ صرف یہ آپ کو اپنے کام پر توجہ مرکوز رکھنے میں مدد ملتی ہے ، بلکہ آپ سستی اور تاخیر کا شکار ہونے سے بھی بچ سکتے ہیں۔

جب کام بہت بڑا نظر آنے لگے تو عموماً سستی و کاہلی طاری ہونے لگتی ہے۔ تاہم ،پہلے قدم کے طور پر آپ کو رفتار بڑھانے کی ضرورت ہے۔ ٹائم مینیجمنٹ کے ایک ماہر کے مطابق:

"سب سے بہتر یہ ہے کہ بہت چھوٹے کام سے شروع کریں۔ دیکھیں کہ سب سے چھوٹا اورقابل عمل قدم کون سا ہے، وہاں سے شروع کریں اور پھر کاموں کی فہرست بنا کر ہر ایک کے لئے ڈیڈ لائن مقرر کریں۔"

مثال کے طور پر ، اگر آپ کوبہت گہرائئ میں جا کر مضمون لکھنے کی ضرورت ہے تو ، آپ اس منصوبے کو چند مراحل میں تقسیم کر سکتے ہیں:
- لائبریری میں جائیں اور اس عنوان پر کتابیں تلاش کریں
- موضوعات کی فہرست کا سرسری جائزہ لیں
- اپنے پیراگراف کے عنوانات لکھیں
- پہلے پیراگراف کا خلاصہ لکھیں

اور اسی طرح اپنے کام کو باقی چھوٹے چھوٹے حصوں میں تقسیم کرتے جائیں۔اس طرح ہر قدم پر عمل کرنا آسان ہو جائے گا اور آپ بڑے کام سے گھبرانے کی بجائے روزانہ چھوٹے حصے مکمل کر کے اسے آسانی سے پورا کر لیں گے۔

5۔منصوبہ بندی کے دھوکے میں آنے سے بچیں

جب آپ دن بھر کے کاموں کو شیڈول کرنا شروع کردیتے ہیں تو بعض اوقات آپ اس خوش فہمی میں مبتلا ہو سکتے ہیں کہ آپ آسانی سے کام مکمل کر لیں گے۔ ماہرین نفسیات اسے"منصوبہ بندیکی غلطی" کہتے ہیں۔یہ کئی وجوہات کی بنا پر آپ کی ٹائم مینجمنٹ کے لئے نقصان دہ ہے، مثلاً:
- جبکسی کام پر آپ کی توقعات سے زیادہ وقت لگتا ہے تو آپ پر دباؤ پڑنے کا زیادہ امکان ہوتا ہے
- اضافی وقت لگنے سے آپ کا شیڈول متاثر ہوجاتا ہے
- یہ سوچ کر کہ آپ کے پاس کافی وقت ہے، آپ اپنے لیے بہت زیادہ کام طے کر لیں گے

اس غلطی سے بچنے کے لیے کام کے لیے تھوڑا زیادہ وقت رکھیں۔ اگر آپ کام سے واقف ہیں تو توقع سے ایک یا ڈیڑھ گنا زیادہ وقت رکھیں، اگر کوئی نئی چیز کرنے جا رہے ہیں تو تقریباً دگنا وقت رکھیں۔

6۔اپنے جسم کی توانائی کے مطابق کام طے کریں

ہم سب دن کے بعض اوقات میں زیادہچست اور پُرجوش ہوتے ہیں۔ اگر ہم ان اوقات سے زیادہ کام کرنا چاہیں تو اپنے جسم کی فطری کیفیت کے خلاف لڑ نہیں سکتے۔

محققین کہتے ہیں کہ ہمارے دماغ کے پس منظر میں ایک اندرونی گھڑیچل رہی ہوتی ہے جو چستی اور سستی کے اوقات متعین کرتی ہے۔ہر شخص کے لیے یہ اوقات تھوڑے سے اختلاف کے ساتھ تقریباً ایک جیسے ہوتے ہیں۔تو طلباء کے لئے اس بات کو سمجھنے کا کیا فائدہ ہے؟

آسان الفاظ میں ہم کہہ سکتے ہیں کہ آپ کو سب سے اہم کام اس وقت کرنا چاہیے جب آپ کے پاس زیادہ توانائی ہو ۔ مثال کے طور پر ایسے اوقات کو لکھنے یا کوئی بہت اہم کرنے کے لیے رکھ لیا جائے، اور ایسے وقت میں جب آپ قدرتی طور پرسستی محسوس کر رہے ہوں ، کوئی کتاب پڑھی جا سکتی ہے یا کم اہم کام کیا جا سکتا ہے۔

7۔صحیح وقت پر وقفے لیں

اپنے وقت کو زیادہ تعمیری بنانے کا ایک طریقہ یہ ہے کہ کام کے دوران میں مناسب وقفے لیں۔ لیکن وقفہ کرنے کا صحیح وقت کون سا ہے؟

نیندپر تحقیق کرنے والے ماہرین کے مطابق ، ہمارے ذہن کو فطری طور پر ہر 90 منٹ کے شدید کام کے بعد آرام کی ضرورت ہوتی ہے۔ حتیٰ کہ اگر آپ نے گھڑی نہیں بھی دیکھی، تب بھی آپ کا جسم آپ کو بھوک ، نیند ، تھکاوٹ ، یاتوجہ کھوجانے کی صورت میں خبردار کر دے گا کہ آپ کوکچھ آرام کی ضرورت ہے۔جب آپ کو ایسا محسوس ہونا شروع ہوجائے تو سمجھ لیں کہ وقفہ کرنے کا وقت آگیا ہے۔ آپ اس وقت کا زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھانے کے لیے کچھ اور کام کرسکتے ہیں:
- آپ جو کام کر رہے تھے اسے چھوڑ دیں۔ اپنے ڈیسک یا کام کے ماحول سے دور ہوجائیں اور اپنے دماغ کو اس کام سے ہٹانے کی کوشش کریں۔
- ہو سکے تو کمرے سے باہر چلے جائیں۔ تازہ ہوا اور قدرتی روشنی توانائی اورکام کرنے کی صلاحیت بڑھانے والی چیزیں ہیں۔
- اپنی آنکھوں کو آرام دیں۔ اس کے لیے ایک عام سی ورزش (20-20-20) کریں، یعنی ہر 20 منٹ کے بعد کم سے کم 20 سیکنڈ کے لئے کم سے کم 20 فٹ دور کسی چیز کو گھوریں۔
- صحیح کھانے کے ذریعے اپنے جسم کو توانائی پہنچائیں۔ پروٹینوالے کھانے آپ کو کیفینیامیٹھی چیزوں کے مقابلے میں کہیں زیادہدیر تک توانائی فراہم کریں گے۔

8۔5منٹ کے قاعدہ کے ذریعے سستی کو شکست دیں

بعض اوقات سستی اور تاخیر سے بچنا مشکل ہو جاتا ہے، لیکن آپ اسے اپنے کام پر حاوی نہ ہونے دیں۔ کام کو جاری رکھنے کے لئے تھوڑا عزم درکار ہوتا ہے۔سستی اور تاخیر پر قابو پانے کے لیے ان حکمت عملیوں کو اپنانے کی کوشش کریں:
- انسٹاگرام کے بانی کیون سسٹروم کےمشہورکردہ 5 منٹ کے قاعدہ پر عمل کرنے کی کوشش کریں۔اس "قاعدہ" کا مطلب خود کویہ بتانا ہے کہ آپ کسی پروجیکٹ پر صرف 5 منٹ کے لیے کام کریں گے۔ زیادہ تر معاملات میں یہ بات آپ کو تحریک دینے کے لیے کافی ہے۔
- جب آپ کام کرنا شروع کردیں تو توجہ بھٹکانے والی چیزوں کو جتنا ہو سکے ہٹا دیں۔ جب تفریح اور سوشل میڈیا جیسی چیزیں آپ کے نزدیک ہوں تو تاخیر کا شکار ہونے کے امکانات بہت بڑھ جاتے ہیں۔لہٰذاتوجہ ہٹانے والی ویب سائٹس ، گیمز یا اس طرح کی دوسری چیزوں سے کام کے دوران میں دور رہنا ہی بہتر ہے۔

9۔اپنے مطالعے کے وقت میں روانی پیدا کریں

جب آپ کا شیڈول تیار ہوجاتا ہے تو آپ اس خوش فہمی میں مبتلا ہو سکتے ہیں کہ اب آپ ایک وقت میں کئی کام کرسکتے ہیں۔ لیکن جتنا آپ بہت سے کام ایک ساتھ کرنے کی کوشش کریں گے ، اتنا ہیکاموں میں وقت زیادہ لگنے لگے گا۔تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ ایک وقت میں کسی ایک کام پر گہری توجہ مرکوز کرنے سے آپ کے وقت کی افادیت 500 گنا تک بڑھ سکتی ہے۔

تاہم ، ایک وقت میں ایک کام کرنا اتنا آسان نہیں ہے۔ اگر آپ کو صرف ایک چیز پر توجہ مرکوز کرنے میں مشکل پیش آ رہی ہے تو ، ان اقدامات کو آزمائیں:
- توجہ بھٹکانے والی چیزوں کو دور کریں (جس میں آپ کا فون بھی شامل ہے)
- چھوٹاکام شروع کریں اور اس کے لیے وقت طے کریں۔شور و غل اور پریشان کن چیزوں سے پاک پانچ منٹ کا وقت بھی بہت فائدہ مند ثابت ہو سکتا ہے
- ہر سیشن کے درمیانکچھ وقفہ کریں

10۔طویل مدتی کامیابی کے لیے بہتر عادات اور معمولات اپنائیں

ہم وہی ہیں جو ہم بار بار کرتے ہیں۔ طلباء اور ہر کسی کے لئے ٹائم مینجمنٹ کی بہترین حکمت عملییہ ہے کہ اس طرح کی عادات اور وہ معمولات اپنائے جائیں جو آپ کے کام میں مدد گار ہوں۔مثال کے طور پر ، صبح سویرے اٹھنا تاکہ آپ اس دن سے پورا پورا فائدہ اٹھا سکیں۔ یاشام کے معمول کو اس طرح ترتیب دینا کہ آپ اگلے دن کا شیڈول اور اہداف پہلے ہی طے کر سکیں۔